April 21, 2014

بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کے پاکستان میں رہنے والے رشتہ داروں کا جواب شکوہ

Bairon e mulk muqeem Pakistanio ke Pakistan main rehny waly rishty daro ka jawab e Shikwa


پاکستانیوں کا وطیرہ ہے کہ تھوڑی تھوڑی باتوں پر ہائے وائے کا ورد کرتے رہتے ہیں اور تازہ ترین وقوعہ جس پر ہر بیرون ملک رہنے والے پاکستانی کو شدت سے تکلیف کا احساس ہے وہ یہ ہے کہ ملک میں رہنے والے ان کے رشتہ دار و لواحقین ان کی بجائے ان کے پیسے سے محبت کرتے ہیں اور ان کےلاکھ منتوں ترلوں کے باوجود ان کے وطن واپسی پر رضامند نہیں ہوتے اور وہ پردیس میں خوار ہو رہے ہیں جب کہ پاکستان میں بسنے والے ان کے بال بچے عیاشیاں کر رہے ہیں۔

حالانکہ ہمیں باہر رہنے والوں سے پوری ہمدردی ہے کہ ہم خود ملک فرنگ میں دھکے کھاتے پھر رہے ہیں لیکن اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں ہمیں پاکستان میں بسنے والے ان پاکستانیوں سے جن کے رشتہ دار باہر کمانے گئے ہیں سے کوئی ہمدردی نہیں لہذا بے ادبِ بلاگریہ میں ہم ان کی آواز شامل کرتے ہوئے آج کا بلاگ ان ملک میں بسنے والے پاکستانیوں کے نام کرتے ہیں جو اپنے بیرون ملک مقیم اقارب کی امداد کے محتاج ہیں اور جن کی ترجمانی کرنے والا کوئی نہیں۔

بیرون ملک مقیم ہمارے والد، چاچا، ماما، رشتے دار کہتے ہیں کہ ہم سے محبت نہیں کرتے۔ اب کوئی بتائے ان کو کہ بھائی ہم تو کسی سے محبت نہیں کرتے ۔ کیا کبھی کسی پاکستانی کو لڑکیوں کے علاوہ کسی سے محبت کرتے دیکھا ہے؟ اب ہم آپ کے لیے دوہرا معیار کہاں سے لائیں۔ اب ان کو پاکستان چھوڑے سالوں بیت گئے ان کو کیا پتہ پاکستان میں اب معاشرہ کیسا ہے۔ یہاں تو قیامت مچی ہے اور ان کو اپنی محبت کی پڑی ہے۔ یہاں تو والدین بچوں کے نہیں، میاں بیوی کا نہیں، محبوب محب کا نہیں اور لڑکیوں سے محبت بھی کوئی مفت نہیں ایزی لوڈ لگتا ہے بھائی۔لیکن اس میں ان کا اتنا قصور بھی نہیں کہ وہ باہر رہ رہ کر تھوڑی جذباتی ہو جاتے ہیں اور وہ یہ سوچتے ہیں کہ ان کو وی آئی پی VIP کا درجہ ملے ان کے آنسو بہیں تو ہم دھاڑیں مار کر رونے لگ جائیں وہ مسکرائیں تو ہم ہنس ہنس کر پاگل ہوجائیں لیکن ایسا کہاں ممکن ہے دنیا بدل گئی پاکستان بدل گیا آج کا نوجوان منافقت کا عادی نہیں اور ویسے بھی ہمارا نعرہ ہے کہ زبان پر کچھ بھی ہو عزت دل میں ہونی چاہیے لہذا ہمارے پردیسی بڑوں کو ایک بار ہمارے دل میں ضرور جھانک لینا چاہیے کہ خواہ ہم منہ پر گالیاں بک رہے ہوں دل سے ہم ان کی عزت ہی کرتے ہیں۔

کہتے ہیں کہ ہم تو واپس آنا چاہتے ہیں لیکن ہمارے پچھلے واپس آنے نہیں دیتے۔ اب آپ ہی بتائیں کیا جب وہ گئے تھے تو ہم سے پوچھ کر گئے تھے؟ اب جو وہ ہم سے پوچھیں تو ہم کیسے کہیں کہ واپس آ جائیں کہ ہم تو عقل کی بات کریں گے کہ اگر واپس آگئے تو گھر کیسے چلے گا؟ اتنی مہنگائی ہوگئی ہے پاکستان میں ۔ پہلے مہینے کا بجلی کا بل ہی ان کی طبعیت درست کر دے گا پھر کہیں گے کاش نہ آیا ہوتا۔ ہم ان کی آسانی کا سوچتے ہیں اور پھر بھی ہم مورد الزام۔ ویسے تو ہمارے دوست گئے ہیں امریکہ، برطانیہ، دبئی وغیرہ وہ بتاتے ہیں کہ وہاں پر اچھی خاصی عیاشی ہوتی ہے لیکن ہمیں یہ یقین نہیں آتا کہ اصل میں یہ خود ہی نہیں آنا چاہتے کہ باہر جا کر اب یہ پاکستان کے قابل ہی نہیں رہے اور نام ہمارا بدنام کر رہے ہیں کہ بدگمانی بری بات ہے کیا پتہ واقعی آنا ہی چاہتے ہوں واپس پاکستان۔

یہ بات لکھ لیں یہ واپس بھی گئے تو ہوائی اڈے پر اترتے ہی ان کی بس ہو جانی ہے آگے کی منزل تو آگے رہ گئی۔ ہوائی اڈے پر جو سلوک ان کے ہم وطنوں نے ان کے ساتھ کرنا ہے ان کا دل کرے گا پہلی پرواز لیکر واپس چلے جائیں۔ پھر آگے ہر آتا جاتا ان کو باہر کی جنت چھوڑ کر ملکی دوزخ میں آنے پر سرزنش کرے گا۔ پھر جب گرمیاں آئیں پھر ان کو احساس ہوگا۔ ہم تو یہاں پر پتھر کے زمانے میں رہ رہے ہیں نہ بجلی نہ پانی نہ گیس نہ پیٹرول کجا زیرزمین ٹرانسپورٹ کے جھولے کجا لو اور مٹی کے جھونکے۔ اور جب مال ختم ہو گا تو رشتے دار، دوست، یار بھی منہ لگانا چھوڑ دیں گے اور تو اور گلی کی نکڑ والا چاچا بھی ادھار ایک پاؤ دال نہیں دے گا تو ان کو پتہ چلے گا۔ ۔ ویسے بھی پاکستان میں تو کتے کو عزت مل جاتی ہے غریب کو نہیں۔

اور کہتے ہیں عیاشی کر رہے ہیں، زیور خرید رہے ہیں، گاڑیاں چلا رہے ہیں، دعوتیں اڑا رہے ہیں اب کوئی جا کر ان کو بتائے کہ نام تو انہی کا ہے۔ کہ فلاں کا بیٹا ہے، فلاں کی بیوی ہے، فلاں کے بچے ہیں، دبئی کا گھر ہے، سعودیہ کا جہیز ہے، امریکہ کا خاندان ہے ہمارا کیا ہے اگر اپنا نام ڈبونا ہے تو بسم اللہ آ جائیں۔ کبھی ہم نے یہ دعوی کیا ہو کہ یہ ہمارا خود کا کمایا مال ہے پھر تو غصہ جائز ہے جب ان کا ہے انہوں نے ہمیں بھیجا ہے تو غصہ کیوںکر کہتے ہیں وہاں کی زندگی بڑی سخت ہے تو بھائی محنت تو کرنی پڑتی ہے نوکری کرنی کونسی آسان ہے اور پیسہ کمانے کے لیے جان تو لگانی پڑتی ہے درختوں پر تو پیسے نہیں اگتے۔ اور پھر کون سا کام آسان ہے اور یہاں کون سی پھولوں کی سیج ہے زندگی۔ قسم سے ایک چوک سے دوسرے چوک تک جانا کسی خواری سے کم ہے۔ زندگی یہاں بھی کوئی آسان نہیں۔ یقین مانیں اینٹیں ڈھونا اتنا مشکل نہیں جتنا لڑکی پھنسانا مشکل ہے اور وہ اس کو عیاشی کہتے ہیں جبکہ آپ تو جانتے ہیں کہ یہ اب سوشل اسٹیٹس ہے اور جب ہماری باری آئی گی تو ہم کیا محنت نہ کریں گے اور اگر ہمیں وہ کوئی بزنس مزنس چالو کر کے دیں گے تو ہم وعدہ کرتے ہیں دل و جان سے محنت کریں گے اور نہ چل سکتا اللہ کی مرضی سے تو دوسرا کاروبار ہم اس سے بھی زیادہ دلجمعی سے کریں گے اور تیسرے میں اس سے زیادہ۔ والدین ویسے ہی کماتے اولاد کے لیے ہیں ہاں اگر وہ چاہتے ہیں ان کے بچے تنگ ہوں، زندگی غربت میں گزاریں، در در کے دھکے کھائیں تو ایسے سہی ہم تنگ ہو لیں گے وہ خوش ہو لیں کہ وہ تو نئے بچے تلاش کرسکتے ہیں ہم تو نئے والدین تلاش کرنے سے رہے اب۔

وہ کہتے ہیں کہ کبھی ہمارے شکرگزار نہیں ہوئےتو پہلی بات تو یہ ہے کہ وہ بھی پاکستانی قوم میں شامل ہیں ہم نے کبھی کسی کو بھولے سے بھی شکریہ ، مہربانی جیسے الفاظ بولے ہیں کیا اور دوسری بات یہ کہ کون بے وقوف اپنے والدین کا شکر گزار ہو اب بندہ بات بات پر ابا تیری مہربانی ڈیڈ تھینک ہو ویری مچ کہتا اچھا لگتا ہے کیا؟ اچھا اللہ کرے ہمارے بچے بھی ہمارے شکر گزار نہ ہوں بس اب خوش؟ اب تو اس مہینے موٹر بائیک کے پیسے بھیجیں گے ناں؟

April 14, 2014

میلان اور میلان طبع

Milan aur milan taba

خدا معلوم مجھے میلان Milan سے کیا چڑ تھی کہ اٹلی Italy کے چھوٹے موٹے شہر بریشیا Brescia ، ویچنزا Vicenza، پادواPadova  وغیرہ دیکھنے کے بعد بھی میں میرا میلان جانے کو دل نہ کرتا تھا۔

پہلی بار جب میں اٹلی گیا تو میلان کے سفر کی پیشکش کی گئی لیکن میں نے اس پر جھیل گاردا جانے کو ترجیع دی اور بارش کے تمام مزہ کرکرا کرنے کے باوجود مجھے میلان نہ جانے پر کوئی افسوس نہ تھا۔

اب میرے سامنے چار رستے تھے۔ میں چھوٹے سے شہر بیرگامو Bergamo چلا جاتا جو پہاڑوں کے درمیان واقع ہے ۔میلان چلا جاتا جو فیشن کا دارالحکومت کہلاتا ہے۔ میں جینوا Genoa  (سوئیس Swiss جنیوا Geneva نہیں بلکہ اطالوی جی نوا) جو کہ سمندر کنارے واقع ہے یا تورن Turin چلا جاتا، تورن جانے ایک وجہ یہ تھی کہ وہ مشہور فٹ بال کلب یوونٹوس Juventus کا گھر تھا۔

April 7, 2014

کرکٹ ٹیم میں منتخب ہونا اور "ژ" خاصیت (ایکس فیکٹر) کا پایا جانا

Cricket team main mutakhib hona or Xe Khasiat (X-factor) ka paya jana


چھوٹے ہوتے ایک ٹی وی پروگرام میں انور مقصود نے معین اختر مرحوم سے جو سلیکشن کمیٹی کے ممبر بنے ہوئے تھے پوچھا "شعیب محمد" کو کیوں نہیں ٹیم میں چنا گیا۔ انہوں نے جواب دیا کہ اس میں چند خامیاں ہیں
ایک تو وہ بلے بازی عمدہ کرتا ہے
دوسرا وہ گیند بازی بھی اچھی خاصی کر لیتا ہے
تیسرا اس کی فیلڈنگ تو لاجواب ہے۔
اور تو اور کیپر ان فٹ ہو جائےتو وہ وکٹ کیپنگ بھی کر لیتاہے۔

April 1, 2014

ایمسٹرڈیم میں ڈیم فول

Amsterdam main damn fool

آئی ایم ایمسٹرڈیم
ایمسٹرڈیم Amsterdam یوں تو ہالینڈ Holland یا نیدرلینڈ Netherlander کا دارالحکومت ہے لیکن یہ ڈچ Dutch یا ولندیزیوں سے زیادہ راستہ بھولے ہوؤں کا دارالحکومت لگا۔ ہر دو طرح کے راستہ بھولے ہوئے۔ گناہ ثواب کے تنگ راستوں پر خود اپنے راہبر بنےراستہ بھولنے والے اور ہاتھوں میں نقشہ تھامے ، گلے میں کیمرہ لٹکائے اور کسی ہمسفر کا ہاتھ تھامے ہر آتے جاتے سے راستہ پوچھتے والے کھلی کشادہ سڑکوں پر مارے مارے پھرنے والے۔ اور مزے کی بات ہے کہ ڈچ بھی راستہ بتانے کے اتنے عادی ہیں کہ کسی اجنبی کو گم سم دیکھ کر لوگ گاڑی روک کر خود ہی پوچھ لیتے ہیں بھائی کہاں جانا ہے؟

March 24, 2014

دوسری شادی

Dosri Shadi

دو بیویوں میں میاں حرام

پوچھا کہ دوسری شادی کرنے کی کیا تک ہے تو بولے بندہ خود کشی کی ایک کوشش میں ناکام ہوجائے تو دوبارہ تو کرتا ہے ناں۔یاد آیا کہ بہت پہلے کسی قابل بندے نے بتایا تھا کہ خود کشی وہ جرم ہے جس میں صرف ناکام ہونے والے کو قانونی سزا ملتی ہے دوسری شادی میں شاید یہی مسئلہ کارفرما ہو البتہ سزا قانونی کی بجائے عائلی ہو۔

March 17, 2014

ملائیشیا کی ملائیشین ائیر لائنز کے گمشدہ طیارے ایم ایچ 370 کی تلاش میں

Malaysia ki Malaysian Airlines k gumshuda tiyare MH370 ki talash main



اللہ جانتا ہے کہ ملائیشا Malaysia کے کھوئے ہوئے MH370 ایم ایچ تین سو ستر طیارے کے مسافروں سے شدید ہمدردی ہے جو کوالالمپور Kualalumpur سے بیجنگ Beijing جا رہا تھا کیونکہ یہاں غیر ملک میں رہتے ہوئے کبھی کبھار پاکستان سے فون بھی آجائے تو دل کانپ اٹھتا ہے کہ اللہ کرے خیر ہو لیکن میڈیا نے اس کو بھی مذاق بنا ڈالا ہے اور قیاس آرائیاں طیارے کو کہاں سے کہاں کھینچ لائی ہیں اور ہر مذاق میں سوائے سیاست کے مذاق کے حصہ ڈالنا ہم اپنا قومی اور بلاگی فریضہ سمجھتے ہیں اس لیے پیش ہے ملائیشا ائیر لائنز کے طیارے پر ہمارا جائزہ و تحقیقی رپورٹ۔

March 10, 2014

میرے کرکٹ کیرئر پر ایک نظر اور آٹھ سال بعد کھیل میں واپسی

mere cricket career per aik nazar or aath saal bad khail main wapsiii



میں کہا کرتا تھا کہ اگر میں کبھی قومی ٹیم یا کسی فرسٹ کلاس ٹیم کی طرف سے کھیلتے ہوئے ٹی وی پر آ بھی گیا تومیرے پروفائل بارے کچھ یوں سکرین پر ابھرے گا
علی حسان۔ دائیں ہاتھ سے کھیلنے والے سست رفتار بلے باز اور دائیں ہاتھ سے تیز سے ہلکی رفتار کے تیز گیند باز۔

March 4, 2014

من کہ ایک اردو بلاگر

Man keh aik Urdu Blogger

میں ایک بلاگر ہوں۔

 بلاگر کیا ہوتا ہے؟ بلاگر کیا نہیں بلاگر کون ہوتا ہے اور بلاگر ہوتا ہے وہ شخص جو بلاگ لکھے۔

 بلاگ اس چڑیا کا نام ہے جس کے دور کے ڈھول ہی سہانے لگتے ہیں۔

نہیں میں اخبار میں نہیں لکھتا ، نہیں کسی رسالے میں بھی نہیں لکھتا، نہیں نہیں کوئی کتاب بھی نہیں لکھ رہا، انٹر نیٹ پر لکھتا ہوں۔

نئے لوگ میری تحریروں بارے کیسے جانتےہیں؟؟؟؟ یہ بہت اچھا سوال پوچھا آپ نے۔ میرے خیال میں گوگل سرچ سے۔۔۔۔یا پھر جب وہ خود بلاگر بنتے ہیں تب۔۔۔۔

February 24, 2014

بننا فوٹو گرافر ہمارا- پہلے کیمرے سے آج تک

Banna hamara photographer- pehly camery se aaj tak


تصویر جانے نہ پائے
سنہ 97 میں میں پہلی بار مری گیا تھا اور پہلی بار ایک کیمرے کا بلا شرکت غیرے مری رہنے تک مالک بنا تھا۔ تب کیمروں میں ریل یا رول ڈلا کرتا تھا اور ایک ایک تصویر سوچ سمجھ کر کھینچنی ہوتی تھی کہ 32 یا 31 یا 30 تصاویر کل ہماری صوابدید میں ہوتی تھیں تاہم رول لینا اور تصویر کھینچنے سے بھی مشکل مرحلہ تصاویر کی دھلائی ہوا کرتا تھا اور ہماری کئی ریلیں دوالیہ ہونے والے فوٹو گرافروں کے ساتھ ہی کباڑ برد ہوئی ہوں گی۔ وہ نائیکون کا کیمرہ تھا جس میں فلیش کیمرے سے الگ ہو سکتا تھا اور پہلی بار فصیل مسجد دیکھنے کی خوشی میں میں فلیش اور کیمرے کا کور وہیں بھول آیا تھا اور واپسی پرخالہ جن سے کیمرہ لیا تھا خاصی عزت افزائی کرانی پڑی۔ 

February 17, 2014

ایک بیرون ملک مقیم پاکستانی کی کہانی

Aik beron-e-Mulk muqeem Pakistani ki kahani



میرے سمیت بیرون ملک رہنے والے پاکستانیوں کی تین خوبیاں ہیں۔
ایک وہ بلا کے شیخی خورے اور ڈینگ باز ہوتے ہیں
دوسرا پیچھے پاکستان میں ان کا سلسلہ حسب و نسب و معاشی حالات اگر شریف و زرداری خاندان سےبڑھ کر نہیں تو کم بھی نہیں ہوتا
تیسرا ان کے حسن و وجاہت کے پیچھے کئی گوریاں دین و دنیا تیاگ کر ذہنی توازن گنوا کر جوگ بجوگ اپنا کر جنگلوں کی راہ لے چکی ہوتی ہیں۔ 

February 11, 2014

تصاویر کے شکار پر جانا۔ تصویری

tasaveer k shikar per jana- tasveeri

گاؤں میں بندہ رہے اور فراغت نہ ہو ایسا تو ممکن نہیں اور بندہ فارغ ہو تو شیطانی چرخہ تو خود سے چل پڑتا ہے ان دنوں ہم گاؤں میں بھی ہیں اور فارغ بھی ہیں اور فارغ بھی ایسے کہ بلاگ پوسٹ کرنے کو انٹرنیٹ نہیں ملتا اور بلاگ ٹائپ کرنے کو کمپیوٹر نہیں ملتا۔ ویسے تو ان مواقع پر ہمارے ہاتھ لڈو، تاس (تاش) ، کیرم، بیٹ بال وغیرہ لگتے ہیں لیکن خدا کا کرنا ایسا ہوا کہ اس بار ہمارے ہاتھ اہک چھرے مارنے والی ہوائی بندوق اور دو کزن لگ گئے جن کا ہم نے فائدہ اٹھاتے ہوئے فوری طور پر شکار کا پروگرام بنا ڈالا۔

February 3, 2014

فضائی سفر، ہوائی اڈے، فضائی کمپنیاں

Fzai Safar, Hawai Addy, Fzai compnies


پچھلے دنوں ایک سروے ہوا جس میں دنیا کے بہترین اور بد ترین ہوائی اڈوں کے بارے ایک سروے کیا گیا تھا۔ ایسے ہی 
پچھلے دنوں ایک سروے نظر سے گزرا جس میں مسافروں سے پوچھا گیا تھا کہ ان کے لیے سب سے تکلیف دہ چیز دروان پرواز کیا ہوتی ہے۔ ہم بھی دنیا بھر کی ہوائی کمپنیوں کے ساتھ سفر کر چکے ہیں مگر جیسے آج تک کسی نے ہمارے بلاگ کو منہ نہیں لگایا ایسے ہی کبھی کسی نے بطور مسافر ہمیں بھی منہ نہیں لگایا کہ میاں منہ میں دانت رکھتے ہو کہ نہیں؟نو سال ہوئے اڑتے کبھی کسی نے نہیں پوچھا میاں کوئی گلہ؟ کوئی شکوہ؟ کوئی صلاح؟ کوئی تجویز؟ لیکن ایک لحاظ سے ہوائی کمپنیوں والے بھی سچے ہیں کہ کبھی ہمارے گھر والوں نے ہم سے کسی معاملے میں مشورہ طلب نہیں کیا پرائے لوگ کیا دید کریں۔ لیکن ہم بھی مشورہ مفت ہےکا چلتا پھرتا نمونہ ہیں اور آتے جاتے کی بانہہ پکڑ کر اس کو بلا طلب کیے مشورہ پیش کرتے رہتے ہیں اس لیے ہم نے سوچا یہاں کیوں پیچھے رہیں اور نتیجۃ مشورہ حاضر ہے۔

January 27, 2014

نیا سال کیسا رہے گا؟ ستاروں کی روشنی میں اپنے بروج کا احوال جانیے۔ برج سنبلہ تا برج حوت

Naya sal kaisa rahy ga? sitaro ki roshni main apny brooj ka ahwaal janiye. burj sunbla ta brj hoot



اس سے قبل آپ پڑھ چکے ہیں کہ 2014 میں عالمی واقعات و حالات کیسے رہیں گے اور پہلے پانچ بروج برج حمل، برج ثور، برج جوزا، برج سرطان اور برج اسد  کا جائزہ ۔ اس بار اپنے اگر آپ کا تعلق برج سنبلہ، برج میزان سے، برج عقرب سے ، برج قوس سے، برج جدی سے، برج  دلو سے یا برج حوت سے ہے تو برج کے حساب سے جانیے کہ اس سال آپ ستاروں کی روشنی میں ہماری تفسیر کے مطابق کیسے نظر آ رہے ہیں۔

January 21, 2014

نیا سال کیسا رہے گا؟ ستاروں کی روشنی میں اپنے بروج کا احوال جانیے۔ برج حمل تا برج اسد

Naya saal kaisa rahy ga? Sitaro ki roshni main apny brooj ka ahwaal janiye. Burj hamal ta burj asad



اس سے قبل آپ پڑھ چکے ہیں کہ 2014 میں عالمی واقعات و حالات کیسے رہیں گے۔ اس بار اپنے برج کے حساب سے جانیے کہ اس سال آپ ستاروں کی روشنی میں کیسے نظر آ رہے ہیں۔طوالت اور مصروفیت کی وجہ سے اس بار پہلے پانچ بروج برج حمل، برج ثور، برج جوزا، برج سرطان اور برج اسد  کا جائزہ لیا گیا ہے۔ باقی برج اگلی بار پیش کیے جائیں گے۔

January 13, 2014

جیتنا ہمارا ہفتہ کھیل میں ہاکی کا مقابلہ

jeetna hamara hafta e khail main hockey ka muqabla


تو ہمارے ملتان پبلک اسکول میں ہر سال ایک اسپورٹس ویک Sports weak یعنی ہفتہ کھیل منعقد ہوا کرتا تھا جس میں تمام کلاسیں ناک آؤٹ کی بنیاد پر کرکٹ، ہاکی، فٹ بال ،والی بال وغیرہ میں ایک دوسرے کے مقابل آیا کرتی تھیں۔ دسویں جماعت میں ہماری کلاس والوں نے ہمیں کوئی خاص گھاس نہ ڈالی اور بارہویں کھلاڑی کے طور پر ہم نے ہاکی میں اپنی ٹیم کو مخالف ٹیم سے شکست کھاتا دیکھا اور ہمارے ہفتہ کھیل کا اختتام ہو گیا۔

نیٹ ورک بلاگ

دیکھا گیا